Placeholder image

ایف بی آر کی پریس ریلیز

ایف بی آر کی پریس ریلیزتازہ ترین

Computerized balloting for selection of Audit Cases for Tax Year 2018 held

Ceremony for Parametric computer balloting as per the Audit Policy, 2019 for selection of cases for audit for Tax Year 2018 in respect of persons or classes of persons falling under all or any of the three domestic Federal Tax Statutes i.e. Income Tax Ordinance 2001, Sales Tax Act 1990, and Federal Excise Act 2005 was held at Federal Board of Revenue, Headquarter, Islamabad.  On this occasion, Advisor to the Prime Minister on Finance & Revenue, Dr. Abdul Hafeez Shaikh, representatives of Federation of Pakistan Chambers of Commerce & Industry (FPCCI), Institute of Chartered Accountants of Pakistan (ICAP), Pakistan Tax Bar Association (PTBA), Islamabad Chamber of Commerce & Industry, Islamabad Women Chamber of Commerce & Industry, Rawalpindi Chamber of Commerce & Industry, All Pakistan Tax Advisors Association and FBR’s Officers were present.

The criteria for selection of cases (for all taxes) for Tax Year 2018 is risk based and parametric. Cases have been selected on scientific approach for which a software has been designed and put in place named as “Risk Based Audit Management System” (RAMS). This software empowers Federal Board of Revenue to focus on non compliant taxpayers and thus facilitate compliant taxpayers helping build confidence of taxpayers in the Audit system.

Chairman FBR Muhammad Javed Ghani said that FBR is working on the principles of transparency, simplicity and predictability and informed that certain categories of the taxpayers are excluded from selection i.e. those picked up for investigations by FBR Intelligence & Investigations Wing, all cases where income chargeable to tax under the head salary and /or pension exceeds 50% of taxable income, except cases having business income. Directors of companies do not qualify for this exclusion. All cases where entire income is covered under Final Tax Regime (FTR), all cases where declaration has been made under the Voluntary Declaration of Domestic Assets Act, 2018, all cases where declaration has been made under the Asset Declaration Ordinance, 2019 and Federal, Provincial and Local Government Departments, have also been excluded.

The Advisor to the Prime Minister on Finance and Revenue, Dr. Abdul Hafeez Shaikh in his address to the participants of ceremony said that the selection of audit cases would be computerized and on risk basis. The advisor also explain that minimum number of cases are being selected for audit by focusing on only high-risk Income tax, Sales tax and FED cases so that audit cases should be completed appropriately and within time. This will also help in reducing the complaints of taxpayers about harassment and corruption. In addition to this, the exclusions in Audit Policy will minimize the undue hardships faced by taxpayers.

Dr. Abdul Hafeez Shaikh also hoped that FBR will continue to improve its standards by providing services to both the government departments and the taxpayers. Against this backdrop, FBR has published Annual Tax Directories 2018 which contains the tax details of common taxpayers and members of the Senate of Pakistan, National as well as Provincial Assemblies so that people of Pakistan can access information.

He further added that this time no new tax has been imposed under current Budget to provide relief. The Advisor assured the business community of his full support and expressed hope that the future is more promising for Pakistan's Business sector. For this, government has also provided subsidies to Export Sector. FBR has taken initiative to sanction more sales Tax refunds this year than in previous year.  For this, FBR has introduced the online FASTER system so that refund claims are processed without involvement of tax officials. In order to further build up the taxpayers confidence, two committees are constituted for redressal of complaints against FBR comprising of Business Committee including representatives of FBR and Business individuals and Technical Committee for complaints about refund matters that would also include representatives from private sector.

In order to carry out parametric computer balloting, Mr. Abdul Hafeez Sheikh, Advisor to the Prime Minister on Finance and Revenue, initiated the ballot process by pressing the computer button for Income Tax Cases, Muhammad Javed Ghani Chairman FBR pressed button for Sales Tax and Mr. Aftab Hussain Nagra, President Pakistan Tax Bar Association pressed the button for Federal Excise Duty, Resultantly, the cases were selected for audit for Tax Year 2018. The number of cases selected for audit in a totally transparent manner in respect of different categories are detailed as under:

i.

Income Tax (Corporate/Non-Corporate) -

10,441

ii.

Sales Tax (Corporate/Non-Corporate)-

2,065

iii.

Federal Excise Duty(Corporate/Non-Corporate)-

27

Total  -

12,533

Keeping in view the facilitation of taxpayers, this year lesser number of cases have been picked up when compared with previous years. National Tax Numbers/ CNIC’s of cases selected for audit have been displayed on the official website of FBR. The Audit Policy, 2019 pertaining to Tax Year 2018 has also been placed on the website of FBR which can be accessed at https://www.fbr.gov.pk/taxpayers-audit/131228.  Moreover, Mrs. Farida Rashid, President, Islamabad Women Chamber of Commerce & Industry and Mian Abdul Ghaffar, President, All Pakistan Tax Advisors Association pressed the button to launch the Tax Directory 2018 for Parliamentarians and Mr. Saboor Malik, President, Rawalpindi Chamber of Commerce & Industry and Mr. Khalillulah Shaikh, President, Institute of Chartered Accountants of Pakistan (ICAP),  pressed the button to launch the Tax Directory 2018 for information of general public which can be accessed at https://www.fbr.gov.pk/tax-directory-for-tax-year-2018/152468. On this occasion, Mirza Abdul Rehman, Chief Coordinator, Federation of Pakistan Chambers of Commerce & Industry (FPCCI) expressed his pleasure that their demands are fulfilled for launching of Risk based Audit Management System (RAMS) and payment of long outstanding refunds of business community.

ایف بی آر نے کمپیوٹر بیلٹنگ کے ذریعے ٹیکس سال 2018 کے  آڈٹ کیسز کا انتخاب کر لیا

آڈٹ پالیسی 2019 کے تحت پیرامیٹرک کمپیوٹر بیلٹنگ کے ذریعے ٹیکس سال 2018 کے لئے آڈٹ کیسز کے انتخاب کی تقریب منعقد ہوئی۔ بیلٹنگ کے ذریعے ایسے افراد کا انتخاب کیا گیا ہے جو انکم ٹیکس آرڈینینس 2001، سیلز ٹیکس ایکٹ 1990 اور فیڈرل ایکسائز ایکٹ 2005 کے تحت کسی بھی ایک یا تمام قوانین کے دائرہ کار میں آتے ہیں۔ ایف بی آر ہیڈ کوارٹر میں ہونے والی اس تقریب میں وزیر اعظم کے مشیر برائے خزانہ و ریوینیو عبدل حفیظ شیخ نے شرکت کی۔ دیگر شرکاء میں پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری، انسٹیٹیوٹ آف چارٹرڈ اکاؤنٹنٹس آف پاکستان، پاکستان ٹیکس بار ایسوسی ایشن، اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری، اسلام آباد وومن چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری، راولپنڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری، آل پاکستان ٹیکس ایڈوائزرز ایسوسی ایشن اور ایف بی آر افسران شامل تھے۔

ٹیکس سال 2018 کے لئے تمام ٹیکسز کے آڈٹ کیسز کے انتخاب کے لئے رسک پر مبنی پیرامیٹرک طریقہ کار کا معیار وضع کیا گیا ہے۔ کیسز کے انتخاب کے لئے سائینسی طریقہ کار اپنایا گیا ہے اور ایک سافٹ وئیر بنایا گیا ہے جو کہ رسک پر مبنی آڈٹ مینجمنٹ نظام کہلاتا ہے۔ اس سافٹ وئیر کی بدولت ایف بی آر کو اختیا ر ملا ہے کہ وہ عدم تعمیل والے ٹیکس گزاروں کو آڈٹ کے لئے منتخب کرے جس کا مقصد تعمیل کرنے والے ٹیکس گزاروں کو سہولت دینا ہے تا کہ ان کا آڈٹ نظام پر اعتمار مستحکم ہو۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیئرمین ایف بی آر محمد جاوید غنی نے کہا کہ ایف بی آر شفافیت ، آسانی فراہم کرنے اور ثابت قدمی کے اصولوں پر کام کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کچھ کیٹیگریز کو آڈٹ کے انتخاب سے خارج کیا گیا ہے۔ ان کیٹیگریز میں ایسے افراد ہیں جن پر ایف بی آر کا انٹیلی جنس اور انوسٹی گیشن ونگ تحقیقات کر رہا ہے۔ ایسے تمام کیسز بھی خارج کر دیئے گئے ہیں جن میں تنخواہ اور پنشن پر ٹیکس لاگو آمدنی ٹیکس عائد آمدنی کے پچاس فیصد سے تجاوز کر گئی ہوسوائے ان کیسز پر جہاں آمدنی کاروبار کے ذریعے آئے۔کمپنیوں کے ڈائیریکٹرز اخراج کے لئے کوالیفائی نہیں کرتے۔ وہ تمام کیسز جن میں تمام آمدنی حتمی ٹیکس رجیم کے دائرہ کار میں آئےاور وہ تمام کیسز جنہوں نے 2018 اور 2019 ایمنسٹی سکیم کے تحت اثاثے ظاہر کر دیئے ہیں وہ بھی آڈٹ کے انتخاب سے خارج کر دیئے ہیں۔ وفاقی ،صوبائی اور مقامی حکومتوں ک ادارے بھی آڈٹ کے لیئے خارج کر دیئے گئے ہیں۔

امور خزانہ و ریونیو پر وزیراعظم کے مشیر ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ نے تقریب کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آڈٹ کیسز کا انتخاب کمپیوٹرائزڈ طریقے سے رسک کی بنیاد پر کیا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ آڈٹ کے لئے کم سے کم کیسز کا انتخاب کیا جا رہا ہے اور اصل توجہ انکم ٹیکس، سیلز ٹیکس اور فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی کے زیادہ رسک والے کیسز پر دی جا رہی ہے تاکہ آڈٹ مناسب طریقے سے اور مقررہ وقت کے اندر مکمل کیا جا سکے۔ اس سے کرپشن اور ہراساں کرنے سے متعلق ٹیکس گزاروں کی شکایات کم کرنے میں بھی مدد ملے گی۔ علاوہ ازیں، آڈٹ پالیسی ان کیٹیگریز کے اخراج کی بدولت ٹیکس گزاروں کو پیش آنے والی غیرضروری مشکلات کم سے کم رہیں گی۔

ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ نے امید ظاہر کی کہ ایف بی آر اپنے معیارات میں مسلسل بہتری لاتے ہوئے سرکاری محکموں اور ٹیکس گزاروں کو بہترین خدمات کی فراہمی کا سلسلہ جاری رکھے گا۔ اس سلسلے میں ایف بی آر نے "سالانہ ٹیکس ڈائریکٹری، 2018" شائع کر دی ہیں جن میں عام ٹیکس گزاروں کے ساتھ ساتھ سینیٹ، قومی اسمبلی اور صوبائی اسمبلی کے ارکان کی ٹیکس تفصیلات بھی شامل ہیں تاکہ پاکستانی عوام ان معلومات تک رسائی حاصل کر سکیں۔

ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ نے مزید کہا کہ شہریوں کو ریلیف دینے کے لئے موجودہ بجٹ کے تحت کوئی نیا ٹیکس عائد نہیں کیا گیا۔ انہوں نے کاروباری برادری کو اپنی بھرپور حمایت کا یقین دلایا اور امید ظاہر کی کہ پاکستان کے کاروباری شعبے کا مستقبل شاندار ہے۔ اس سلسلے میں حکومت نے برآمدی شعبے کو سب سڈیز بھی فراہم کی ہیں۔ ایف بی آر نے گزشتہ سال کی نسبت رواں سال زیادہ سیلز ٹیکس ری فنڈز ادا کئے ہیں۔ اس سلسلے میں ایف بی آر نے "فاسٹر" کے نام سے ایک آن لائن سسٹم متعارف کرایا ہے تاکہ ری فنڈ کلیمز میں ٹیکس  عملہ کے کسی کردار کے بغیر خود کار طریقے سے ضروری کارروائی کی جا سکے۔ ٹیکس دہندگان کا اعتماد مزید مضبوط بنانے کے لئے ایف بی آر کے خلاف شکایات کے ازالہ کے لئے دو کمیٹیاں تشکیل دی گئی ہیں جن میں سے ایک بزنس کمیٹی ہے جس میں ایف بی آر کے نمائندے اور کاروباری افراد شامل ہیں جبکہ دوسری ری فنڈ امور سے متعلق ٹیکنیکل کمیٹی ہے جس میں نجی شعبے کے نمائندوں کو بھی شامل کیا گیا ہے۔

پیرامیٹرک طریقے سے بذریعہ کمپیوٹر قرعہ اندازی کے باقاعدہ آغاز کے لئے وزیراعظم کے مشیر عبدالحفیظ شیخ نے انکم ٹیکس کیسز کے لئے کمپیوٹر کا بٹن دبایا جبکہ چیئرمین ایف بی آر محمد جاوید غنی نے سیلز ٹیکس اور صدر پاکستان ٹیکس بار ایسوسی ایشن آفتاب حسین ناگرہ نے فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی کا بٹن دبایا جس کے نتیجے میں ٹیکس سال 2018 کے لئے آڈٹ کئے جانے والے کیسز کا انتخاب کیا گیا۔ مختلف کیٹیگریز کے تحت مکمل طور پر شفاف انداز میں آڈٹ کے لئے منتخب کئے جانے والے کیسز کی تعداد درج ذیل ہے:

i.

انکم ٹیکس (کارپوریٹ/ نان کارپوریٹ) -

10,441

ii.

سیلز ٹیکس (کارپوریٹ/ نان کارپوریٹ)-

2,065

iii.

فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی (کارپوریٹ/ نان کارپوریٹ)

27

ٹوٹل -

12,533

 

ٹیکس گزاروں کی سہولت کے پیش نظر  گزشتہ سالوں  کی نسبت رواں سال کم تعداد میں کیسز چنے گئے ہیں۔ آڈٹ کے لئے منتخب کئے جانے والے کیسز کے نیشنل ٹیکس نمبر/ قومی شناختی کارڈ نمبر، ایف بی آر کی ویب سائٹ پر فراہم کر دئیے گئے ہیں۔ ٹیکس سال 2018 سے متعلق آڈٹ پالیسی، 2019، بھی ویب سائٹ پر موجود ہے جو یہاں سے حاصل کی جا سکتی ہے: https://www.fbr.gov.pk/taxpayers-audit/131228۔ اس کے علاوہ، محترمہ فریدہ رشید، صدر، اسلام آباد ویمن چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری اور میاں عبدالغفار، صدر، آل پاکستان ٹیکس ایڈوائزرز ایسوسی ایشن نے ارکان پارلیمنٹ کی ٹیکس ڈائریکٹری کے اجراء کے لئے بٹن دبایا جبکہ انسٹی ٹیوٹ آف چارٹرڈ اکاؤنٹنٹس آف پاکستان (آئی سی اے پی) کے صدر خلیل اللہ شیخ نے کمپیوٹر بٹن دبا کر ٹیکس ڈائریکٹری 2018 کا اجراء کیا۔ یہ تمام معلومات عام شہریوں کے لئے دستیاب ہیں اور اس پتہ سے حاصل کی جا سکتی ہیں: https://www.fbr.gov.pk/tax-directory-for-tax-year-2018/152468  ۔  اس موقع پر فیڈریشن آف پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری (ایف پی سی سی آئی) کے چیف کوآرڈینیٹر مرزا عبدالرحمان نے اس بات پر خوشی و اطمینان کا اظہار کیا کہ "رسک بیسڈ آڈٹ مینجمنٹ سسٹم" (آر اے ایم ایس) کے اجراء اور کاروباری برادری کے دیرینہ واجبات کی ادائیگی سے متعلق ان کے مطالبات پورے کر دئیے گئے  ہیں۔

 

 

Adnan Akram Bajwa
Secretary PR FATE Wing
Sep 18, 2020